پاکستان تحریک انصاف نے ملتان میں پی پی پی کی دو اہم وکٹیں گرادیں، پی ٹی آئی مقبول ترین سیاسی جماعت بن گئی : شاہ محمود قریشی

 

پاکستان تحریک انصاف نے ملتان میں پی پی پی کی دو اہم وکٹیں گرادیں، پی ٹی آئی مقبول ترین سیاسی جماعت بن گئی : شاہ محمود قریشی
ملتان (نمائندہ سرائیکستان )پاکستان تحریک انصاف نے ملتان میں پی پی پی کی دو اہم وکٹیں گرادیں۔ سابق صدر پی پی ضلع ملتان ملک اکرم کنہوں اور سابق ٹکٹ ہولڈر صوبائی اسمبلی جلال پور پیروالا لعل خان جوئیہ کی مخدوم شاہ محمود قریشی سے ملاقات تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کردیا۔ دونوں شخصیات نے گزشتہ روز باب القریش ملتان میں پاکستان تحریک انصاف کے وائس چیئرمین مخدوم شاہ محمود قریشی سے ملاقات کی اور تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کردیا۔ مخدوم شاہ محمود قریشی نے اس موقع پر وفد سے ملاقات کرتے ہوئے بتایا کہ پی پی اور ن لیگ کی ایک بہت بڑی تعداد کی تحریک انصاف میں شمولیت اس بات کا ثبوت ہے کہ تحریک انصاف اس وقت پاکستان کی سب سے بڑی اور مقبول ترین سیاسی جماعت ہے۔ انہوں نے کہا ابھی بھی بہت نامور سیاسی شخصیات پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کرنا چاہتی ہیں۔ آئندہ انتخابات سے قبل پی پی اور ن لیگ کو امیدوار ڈھونڈا مشکل ہو جائے گی۔ انہوں نے کہا دونوں جماعتوں نے اقتدار کی باریاں لیں لیکن عوام کو ان کے اقتدار کے ثمرات نہ مل سکے ۔ پنجاب میں طویل عرصے سے ن لیگ کی حکومت چلی آرہی ہے۔ لیکن عوام کو پینے کا صاف پانی تک مہیا نہیں ہے۔ ملتان میں سورج میانی روڈ پر سپیڈو بس کا سواریوں سمیت سڑک کے اندر دھنس جانا نام نہاد خادم اعلیٰ کے ترقیاتی کاموں کے اعلیٰ معیار پر سوالیہ نشان ہے ۔ یہ شکر ہے کہ اس میں کسی انسانی جان کا نقصان نہیں ہوا۔ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ملتان میں میٹرو کی ضرورت نہیں تھی عوام کے پیسوں کا 70ارب روپیہ خام خواہ میں میٹرو بس پروجیکٹ پر لگا دیا گیا اور صبح سے شام تک خالی بسیں چل رہی ہیں۔ حکمرانوں کو پرواہ تک نہیں۔یہی 70ارب روپیہ اگر جنوبی پنجاب کے صحت ‘ تعلیم اور سڑکوں کے پروجیکٹ پر لگا دیا جاتا تو جنوبی پنجاب کی حالت بدل جاتی ۔ انہوں نے کہا تحریک انصاف واضح طور پر اعلان کر چکی ہے کہ اگر اللہ نے ہمیں موقع دیا اور اقتدار میں آئے تو انشاءاللہ جنوبی پنجاب کو علیحدہ انتظامی یونٹ بنائینگے۔جس سے یہاں کے عوام کی محرومیاں دور ہونگی اور عوام کو اپنے مسائل کے حل کیلئے تخت لاہور کا سفر نہیں کرنا پڑے گا۔ انہوں نے کہا پی پی اور ن لیگ دونوں صوبو ںکیلئے مخلص نہیں تھے۔ اگر چاہتے تودونوںجماعتیں دوران اقتدار علیحدہ صوبہ بنا سکتے تھے۔ لیکن انہوں نے عملی اقدامات نہ کئے۔ اب جبکہ تحریک انصاف نے علیحدہ صوبے کو اپنے منشور میں شامل کیا تو دونو جماعتوں کی قیادت کو علیحدہ صوبہ یاد آگیا ہے ۔ تحریک انصاف فیڈریشن کی حامی ہے اور وفاق کی مضبوطی چاہتی ہے اور وفاق اس وقت مضبوط نہیں ہوسکتا جب تک نئے انتظامی یونٹ تشکیل نہیں دیئے جاتے۔ مخدوم شاہ محمود قریشی نے دونوں شخصیات کو تحریک انصاف میں شمولیت پر خوش آمدید کہا اور کہا کہ ان دونوں شخصیات کی شمولیت سے تحریک انصاف کو تقویت ملے گی۔ دریں اثناءمخدوم شاہ محمود قریشی نے گزشتہ روز مصروف دن گزارا وہ قومی حلقہ این اے 156 اور 157میں مختلف شخصیات کی رہائشگاہ پر گئے اور چیئرمین ‘ وائس چیرمین اور پی ٹی آئی کارکنوں سے ملے اور حلقہ کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔ممتاز آباد میں مفتی ہدایت اللہ پسروری مرحوم کی رسم چہلم میں شرکت کی اور دعا کروائی۔

پوسٹ ٹیگز:

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

*
*